سیکس سٹوری جب کنوار پن کی یاد ستانے لگی

(sex story jab kanwar pan ki yaad satanae lagi)

Sex Story jab kanwara thaa mijee karta raha ab bura phansa hoon

میرے نام امیر ہے میں ایک کالج  میں پڑھاتا ہوں میرے ساتھ بہت ساری ٹیچرز پڑھاتی  ہے جن میں سے ایک ٹیچر مجھے بہت اچھی لگتی ہے. ایک بات بتا دو مجھے سیکس عام لوگوں سے کچھ زیادہ ہی اچھا لگتا ہے ۔اس کا نام امینا ہے  میں اس کو روز دیکھتاہوں .اور اس سے بات کرنے کی کوشش کرتا ہوں مگر وہ ہمشہ چپ رہتی ہے

اور وہ کسی سے بات نہیں کرتا ہے .مجھے اس کے ممے بہت اچھے لگتے ہے اس کے پاکستانی ممے کا سایز چھتیس  ہے  اور اس کے گانڈ مجھے بہت اچھی لگتی ہے اور وہ اپنا سر پر ہمشہ ڈوپٹا رکھتی ہے. اور وہ اپنی آنکھیں نیچی رکھتی ہے اس سے بات بھی کرو تو وہ اوپر نظرے نہیں اٹھاتی ہے

ایک بار اس کا ڈوپٹا نیچے سراوے لگ رھا تھا. اور میں غلطی سے اس کے ڈوپٹا پر چڑھ گیا تھا  اور پھر یہ گرنے لگی تو میں نے اس کو پکڑا اور اس پاکستانی ممے والی کے کمر پر اپنا ہاتھ رکھا اور اس کو اپنے قریب لے آیا  اور پہلی بار اس نے مجھے سے اپنی نظریں ملائیں اور ہم ایک دوسرے کو دیکھ رہے تھے

اور پھر اس نے تھوڑی دیر بعد مجھے بولا کے آپ کا بہت بہت شکریہ آپ نے مجھے گرنے سے بچایا  اور پھر اس طرح ہم بات کر نے لگے  اور کچھ دنوں  بعد ہماری بات ہو گئی. اور  پندرہ بیس دن میں نے اس سے اس کا نمبر مانگا اور اس نے مجھے اپنا نمبر دے دیا  اور پھر ہم میسج میں بات کرتے

ہم فون میں بات کرنے لگے  اور میں اسے اپنا پیار کا اظہار کر دیا اور پھر ہم کچھ دن پیار کی بات کرتے تھے اور پھر کچھ دن بعد ہم سیکسی اور رومانس کی بات کر نے لگے.  اور پھر میں نے اسے اگلے دن ملنے کا بولا تو اس نے مجھے منع کر دیا.  ایک دن یونیورسٹی کے بچوں کے چھٹی ہوئی تو ہم دونو اوپر والے فلور میں اکیلے تھے

اور پھر میں اس پاکستانی ممے والی کے پاس گیا اور اس کے قریب گیا اور اس کو پیار کر نے لگا پکڑ کر اور تھوڑی دیر بعد یہ مجھے منع کر نے لگی  تو میں اس پاکستانی ممے والی کے ہونٹون کو چوسنے لگا  اور میں اس کے پاکستانی ممے والی کو اپنے ہاتھو ں سے دبانے لگا

اور وہ میرے لنڈ کو پکرنے لگی  پھر میں نے اس کو ڈیسک پر لٹا دیا  اور اس کے کپڑے کو اتارا اور اس کے پاکستانی ممے کو اپنے منہ  میں چوسنے لگا  اور پھر میں نے اس کے کپڑے اتارے اور اس کو اپنا لنڈ چوسانے لگا اور پھر اس کی جوانی کی چوت میں اپنا لمبا جوان لنڈ ڈالنا شروع کر دیا

اور اس کی چوت میں اپنی چدائی لگا کر منی گرا دی اور اسکے بعد میں نے اس پاکستانی ممے والی ٹیچر کی جوانی کو اپنی ٹھرک مٹانے کا ذریعہ بنا لیا تھا .اور اسکی روز چدائی لگا ئی تھی شروع کے دنوں میں اسکو بھی مزہ ملتا تھا مجھ سے چد کر . ا سکے بعد میری بھی شادی ہو گئی اور اس کی بھی شادی ہو گئی

اور  اب میں میں شادی شدہ ہوں کنوار پن کے دنوں کو یاد کر کے روتا ہوں. اور  اگرچہ میری شادی پسند سے ہوئی ہے میری بیوی بہت خوبصورت ہے وہ میرے پڑوس میں رہتی تھی اور میں نے اسے پسند کر لیا اور رشتہ بھیج دیا آخر ہماری شادی ہوگئی

اور میری پہلی رات بہت ہی اچھی گزری. میں نے پہلے تو اسکے کپڑے اتارے اور اسکے چکنی جوانی والے جسم کو پاگلوں کی طرح چومنے لگا.اور پھر اسکی مست گرم چوت کو چاٹنے لگا اور وہ ایسے چلا رہی تھی جسے صدیوں کی پیاسی ہوں

میں نے پھر اپنے کپڑے اتارے اور اسکے اوپر پورا چڑھ گیا اور اپنا زبردست جوان لوڑا اسکے اندر ڈال دیا اور وہ چلائی پھر پوری رات ہم ایک دوسرے سے پیار کرتے رہے .اور سو گئے دن گزرتے گئے اور میرا ایک بیٹا اور ایک بیٹی ہوئی ہم ہماری دنیا میں بہت خوش تھے

کہ ایک دن میری ملاقات ایک مست گرم چوت لڑکی سے ہوئی اسکا نام انیتا تھا وہ بہت ہی خوبصورت تھی میری اس سے دوستی ہو گئی اور پھر بات بستر تک پہنچ گئی. اور ایک دن میں اسے لے کر اپنے گھر آگیامیری بیوی اپنے میکے گئی ہی تھی وہ پہلی بار ایسا کر رہی تھی

میں پہلے اسکے کپڑے اتارے. اور پھر اپنے پھر میں اسے کِس کرنے لگا اور وہ مست گرم چوت بھی مجھے کِس کرنے لگی اور میں نے اسکے بوبس کو چوسنا شروع کر دیا اور پھر نیچے تک چومتا رہا پھر میں اپنا زبردست جوان لوڑا اسکی مست گرم چوت میں ڈالا تو وہ ایک دم سی چلائی

ایک دن یہ بات میری بیوی کو پتا چل گئی اس نے مجھ سے طلاق لے لی .اور بچے میرے حوالے کر دیئے میں نے انیتا سے شادی کرلی اور آج میری سہاگ رات ہےمیں جب اپنے کمرے میں آیا تو انیتا بیٹھی میرا اتظار کر رہی تھی میں اندر چلا گیا اور گیٹ بند کر دیا اور اسے بیڈ پر پورا چڑھا لیا اور اسے پیار کرنے لگا پھرمیں نے اسکے کپڑے اتار دیئے اور اس مست گرم چوت کے بوبس کو چوسنے لگا

وہ بھی مست ہونے لگی .اور میں نے اسکے پورے چکنی جوانی والے جسم کو چومنے لگا

اور پھر آہستہ آہستہ میں نے اسکی مست گرم چوت کو بھی چومنا شروع کر دیا اور پھر میں نے اپنے کپڑے بھی اتارے اور اسکے اوپر پورا چڑھ گیا اور پھر اپنا زبردست جوان لوڑا اسکی مست گرم چوت میں ڈالنے لگا وہ تھوڑا سا چلائی  مست گرم چوت اور میں اندر ڈالتا ہی گیا

اور پھر اپنے زبردست جوان لوڑا کو پورا اندر اور پھر اسکے باہر کرنے لگا ایسا کرنے سے مجھے بہت مزہ آرہا تھا اور وہ بھی بہت مزہ لے رہی تھی اور پھر کچھ دیر کے بعد میں فارغ ہو گیا کچھ دن تو وہ میرے بچوں کے ساتھ ٹھیک رہی پر جب اس مست گرم چوت کے ہاں بیٹا ہوا تو اسکا رویہ بدل گیا

اور وہ بچوں کے ساتھ بہت برا سلوک کرنے لگی اور پھر ہمارے بیچ دوریاں بڑھتی گئیں اور ہم ایک گھر میں رہ کر بھی ایک دوسرے سے بات نہیں کرتے ہیں. اور پھر میں نے اس کے ساتھ بھی رشتہ توڑ لیا ہے اب دونوں کے بچے ان کی اپنی ماوں کو واپس کر دیئے ہیں بس میں ہوں اور میری تنہائی اسی لیئے کنوار پن کے دنوں کو یاد کر کے روتا ہوں زندگی کیا دوستوں واقعی بے وفا ہے

Sex Story ab sawai yadae maqzi k khuch nahe hae

 

What did you think of this story??

Comments

Scroll To Top