اردو سیکس سٹوری سیکورٹی گارڈ نے کرایہ دار لڑکی چودی

(urdu sex story security guard ne karaya dar ladki chodi)

urdu sex story jab security gurad ne ladki ki kamzori se faida utha ke choda

اردو کہانی ایک چوکیدار کی اور اس کی محبوبہ کی چوکیدار کو ا سلڑکی سے پیار ہوجاتا ہے اور وہ ا سکی پھدی لینے کے پیچھے پڑجاتا ہے لیکن لڑکی پڑھی لکھی

اور چالاک تھی وہ سوچتی ہے کہ میرا معیار یہ نہیں  کہ اب مجھے چوکیدار چودنے آئے تو وہ چوکیدار کو کہتی ہے میں تم سے دوستی نہٰں کر سکتی

اور پھر چوکیدار ایک دن ا سکی پھدی لینے میں کامیاب ہوجاتا ہے کیسے یہ ہی کہانی کا دلچسپ پہلو ہے وہ کیسے کامیاب ہوتا ہے کہانی پڑھیں اور جانیئے لیکن اپنی رائے ضرور دیتے رہیں

آپ اس اردو کہانی کے بڑے کرادر واچ مین کی کہانی اس کی اپنی زبانی  پڑھیں تو اور بھی مزہ آئے گا تو شروع کرتے ہیں سیکسی کہانی میں ایک واچ مین ہوں

میں آج آپ کو اپنی دیسی کہانی سناتاہوں میں ایک چار منزلہ بلڈنگ  جس میں  سینکٹروں فلیٹ  بنے ہوئے ہیں اور  میں میں واچ مین ہوں  ان فلیٹوں میں دفتروں  میں کام کرنی والی لڑکیوں کی تعداد زیادہ ہے

اور ایک پورشن میل کا الگ بنا ہوا ہے  بہت اچھے نئے فلیٹ بنے ہوئے ہیں اور متوسط طبقے  اور اپر متوسط طبقے کے لوگ یہاں رہائش  پذیر ہیں

میں کئی سال سے یہاں کا واچ میں ہوں اور ایک اچھا واچ مین سب جانتا ہوتا ہے کہ یہاں کون کون لوگ رہتے ہیں ان کے رات کو مشاغل کیا ہیں اور ان کی حرکات  سے اچھی طرح واقف ہوتا ہے

تو وہاں پر ایک لڑکی  رہتی تھی اکیلی ہی تھی وہ اور کسی دفتر  میں کام کرتی تھی وہ بہت ہی خوبصورت تھی اور مجھے بہت اچھی لگتی تھی اور اس کے بال بھی بہت اچھے تھے اور بہت ہی لمبے تھے مجھے اس سے پیار ہو گیا تھا وہ اوپر والی منزل میں  رہتی تھی

میں اسسیکسی بدن  والی لڑکی سے بات بھی کرتا تھا پر میں نے اس کو ابھی تک یہ نہیں بتایا تھا کے میں اس سے پیار کرتا ہوں  ایک بات اور بتاتا چلو میرا تعلق شمالی علاقہ سے ہے

میں خوبصورت نوجوان سفید اور گلابی کلر والا لڑکا ہوں میری تعلیم بی اے ہے لیکن حالات کی گردش کہہ لیں فارغ رہنے کی بجائے واچ میں بن گیا ہوں اور یہ بات چند ایک لوگوں کو ہی معلوم تھی باقی سب مجھے پٹھان چوکیدار ہی سمجھتے تھے

پھر میں نے اس کو یہ بات بھی بتا دی کے میں اس سے بہت پیار کرتا ہوں تو اس نے کہا پر میں تو تم سے پیار نہیں کرتی ہوں  تم ایک عام واچمیں  ہو میرا تمہارا کیا جوڑ ہے

یں نے کہا میری تعلیم بی اے ہے اور نوکری بھی مل جائے گی تو میرا بھی معیار بن جائے گا اور دیکھو مٰں ایک خوبصورت نوجوان تو ہوں نا لیکن وہ نا مانی

تو اس نے کہا پر میں تو تم سے پیار نہیں کرتی ہوں تو میں نے تو اس سے کہا پیار تو کسی سے بھی ہو جاتا ہے پیاری میرے گاوں والی حسین لڑکیوں جیسی لڑکی تھی

وہ ایک دم لش مست جوان پھر میں نے ا سکو کہا ایک ہفتے تک سوچ لو اگر تم کو بھی میرے سے دوستی کرنا پسند ہو تو بتا دیناتم مجھے کی سوچ کے بتا دینا میں تم کو کچھ دن کا ٹائم دیتا ہوں

پھر تم مجھے اپنا جواب دینا تو اس لڑکی نے کہا ٹھیک ہے میں تم کو سوچ کے بتاؤ گئی پھر کچھ دن گزر گئے  اور ان گزرے دنوں میں اس کی اچھی طرح نگرانی کرتا رہا

اس کے پاس رات ایک بجے کے قریب  انہی  فلیٹوں  میں رہنے والا نوجوان چپکے سے آتا تھا اور چار بجے صبح چپکے سے واپس اپنے فلیٹ چلا جاتا تھا مجھے اس لڑکی کی کمزوری ہاتھ لگ گئی تھی

تو میں نے اس سے کہا کہ میں نے تم سے کچھ کہا تھا تو اس نے کہا تم سے دوستی نہٰں ہو سکتی تب مجھے غصہ آیااور مٰں نے سوچ لیا گھی سیدھی انگلیوں سے نہٰں نکلے گا

تب میں  نے اس کی آنکھوں میں دیکھااور بولا کوئی بات نہیں ہم سے تو وہ شہزاد  صاحب اچھے ہیں جو روز رات کو کوچہ یار میں نظر آتے ہیں

اور دیدار کے بعد صبح چار بجے واپسی ہوتی ہے اس کی آنکھیں کھل گئی اور پینترا بدلتے ہوئے بولی ارے میں تو آپ سے مذاق کر رہی تھی مجھے بھی آپ اچھے لگتے ہیں

پھر میں نے اس سے کہا کے کیا ہے تمہارا جواب تو اس لڑکی نے کہا کیست بتاوں ارے بابا ہاں میں ہے میرا جوب  ہے میں بھی تم سے پیار کرتی ہوں پھر میں بہت خوش ہو گیا

اور پھر میں نے اس سے کال پر بھی باتیں کرنا شروع کر دیا  کئی دن ایسا ہوتا رہااور پھر میں نے اس کو اپنے گھر پر آنے کے لیے کہا تو وہ کچھ دیر میں آئی تھی  میرا پورشن ہی اسی فلیٹ میں تھا پھر ہم نے بہت سی باتیں کی اور ہم نے ایک ساتھ کھانا بھی کھایا تھا

پھر ہم دوسرے کا ہاتھ پکڑ کر روم میں چلے گے تو میں نے اس دیسی جوان حسینہ   بڑے ممے والی سیکسی گانڈ والی کو ندر جاتے ہی پیچھے سے پکڑ کر کسسنگ کرنا شروع کیا

کیوں کے وہ مجھے بہت ہی زیادہ اچھی لگ رہی تھی اور وقت بھی کم تھا پھر میں نے اس دیسی کہانی والی کی پیار سے قمیض بھی اتار دی اور اس کے گورے مست جسم کے سیکسی بڑے بوبز کو سک کرنے لگا

مجھے تو اسوقت بہت مزہ آرہا تھا اور اسکے جوان جسم کے سکسی بڑے بوبز کو چوسنے لگا اس کے جسم کے سکسی ممےبہت ہی نرم تھے میرا تو لنڈ فل ٹائٹ ہو رہا تھا

کے میں ان کو اپنے منہ میں ہی رکھ لیا اور ان کو سک کرتا ہوا بہت مزہ آرہا تھا پھر میں نے اس کی کچھے دیر میں پیار کرتے ہوئے  شلوار بھی اتار دی اور پھر میں نے اپنا کھڑا ہوا لوڑا نکال کے اس کی چوت میں ڈال دیا

اور کھڑا ہوا لوڑے کو چت کا مزہ دینے لگا اس کو زبردست والا چدائی میں درد ہونے لگا اور اسکی تو درد سے اس کی سکسی جوانی کی آوازیں آنے لگی پر پھر بھی میں اس کی چوت مارتا رہا

میں اس کے اوپر تھا اور لڑکی میرے نیچے ہی مست ننگھی لیٹتی رہی میرا تو دل کر رہا تھا کہ فارغ نا ہوں لیکن ہونا تو تھا تو دوستوں اس طرح میں نے سمجھداری سے اس  اردو کہانی والی جوان حسینہ کو چودا

urdu sex story ladki kabhi secret na dena warna chut dena pad sakti he

What did you think of this story??

Comments

Scroll To Top